پنجاب اجالا پروگرام کے تحت صوبہ بھر میں اب تک 15 ہزار سے زائدسکولوں اور کالجوں کو شمسی توانائی پر منتقل کیا جا چکا ہے

0
382

ٹوبہ ٹیک سنگھ( )وزیر توانائی پنجاب ڈاکٹر اختر ملک نے کہا ہے کہ پنجاب اجالا پروگرام کے تحت صوبہ بھر میں اب تک 15 ہزار سے زائدسکولوں اور کالجوں کو شمسی توانائی پر منتقل کیا جا چکا ہے جبکہ تمام اضلاع کے سرکاری ہسپتالوں، سرکاری دفاتر،جیلوں، پناہ گاہوں، دارالامانوں اور مزاروں کو شمسی توانائی پر منتقل کرنے کے سینکڑوں منصوبے زیر تکمیل ہیں۔ ان خیالات کا اظہار انہوں نے فیصل آباد انڈسٹریل اسٹیٹ کے سابق صدر میاں کاشف اشفاق سے ملاقات کے دوران کیا۔اس موقع پر قائد اعظم تھرمل پاور کمپنی کے بورڈ ممبر میاں وسیم اختر بھی موجود تھے۔ ڈاکٹر اختر ملک نے کہا کہ ان منصوبوں سے پنجاب حکومت کو سالانہ اربوں روپے کی بچت ہوگی اور ماحولیاتی آلودگی میں بھی واضح کمی ہو گی۔انہوں نے ٹوبہ ٹیک سنگھ اور فیصل آباد میں محکمہ توانائی کے منصوبوں پر تبادلہئ خیال کرتے ہوئے کہا کہ صرف فیصل آباد اور ٹوبہ ٹیک سنگھ کے اضلاع میں سولر انرجی کے 3 ہزار 336کلوواٹ کے منصوبے شروع کیے گئے ہیں۔ ان پر 65 کروڑ روپے کی لاگت آئے گی اور ان سے سالانہ دس کروڑ روپے کی بچت ہوگی۔ صوبائی وزیر کا کہنا تھا کہ پنجاب میں وزیر اعظم عمران خان کے ویڑن کے مطابق توانائی کے متبادل ذرائع پر خصوصی توجہ دی جا ری ہے جس سے انکے موسمیاتی تبدیلی پر قابو پانے کے ایجنڈے کو تقویت مل رہی ہے۔ ڈاکٹر اختر ملک نے مزید کہا کہ فیصل آباد اور گوجرانولہ میں صنعتوں کو لوڈ شیڈنگ سے نجات دلانے اور سستی بجلی فراہم کرنے کے لیے کینال ٹاپ سولر ٹیکنالوجی کا منصوبہ بھی شروع کیا جا رہا ہے۔ میاں کاشف اشفاق نے ان منصوبوں کو سراہتے ہوئے کہا کہ توانائی کے متبادل ذرائع تلاش کرنا وقت کی اہم ترین ضرورت ہے۔ انہوں نے کہا کہ وزیر اعلیٰ عثمان بزدار اور ڈاکٹر اختر ملک نے ایک گمنام محکمے کو گاؤں گاؤں تک روشناس کرا دیا ہے۔ انہوں نے کہا کہ یقیناً ان منصوبوں سے نچلی سطح پر معاشی، موسمیاتی اور سماجی حوالے سے مثبت تبدیلی آ رہی ہے اور بجلی سے محروم دور دراز کے دیہات بھی روشن ہو رہے ہیں۔

جواب چھوڑ دیں

براہ مہربانی اپنی رائے درج کریں!
اپنا نام یہاں درج کریں